رازداری پالیسی

ہمارے بارے میں

رابطہ

  • عالمی نیوز
  • ہوم

    Hindi

    Epaper Urdu

    YouTube

    Facebook

    Twitter

    Mobile App

    جسٹن ٹروڈو کینیڈین انتخابات میں اکثریت لینے میں ناکام

    ٹورنٹو : کینیڈا کے عام انتخابات میں وزیر اعظم جسٹن ٹروڈو کی لبرل پارٹی کسی طرح اقتدار کو بچانے میں کامیاب ہوئی ہے لیکن اب وہ ایک اقلیتی حکومت کے وزیر اعظم ہوں گے۔کہا جا رہا ہے کہ لبرل پارٹی کو 156 نشستیں ملیں گی جو کہ اکثریت سے 14 نشستیں کم ہے جس سے جسٹن ٹرڈو کے لیے اپنی دوسری مدت میں قوانین منظور کروانا مشکل ہو جائے گا۔امید ظاہر کی جا رہی ہے کہ کنزرویٹو حزب اختلاف کو عوامی ووٹ ملا ہے لیکن وہ نشستوں میں منتقل نہیں ہو سکا۔

    حزب اختلاف کے بارے میں کہا جا رہا ہے کہ انھیں 122 سیٹیں ملیں گی جو کہ ماضی کی 95 سیٹوں سے 27 نشستیں زیادہ ہے۔بہر حال پیر کی شب کو بائیں بازو کا رجحان رکھنے والی نیو ڈیموکریٹک پارٹی (این ڈی پی) کی سیٹوں میں بڑی کمی دیکھی گئی لیکن اس کے رہنما جگمیت سنگھ کنگ میکر یعنی حکومت ساز بن سکتے ہیں۔این ڈی پی کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ وہ کینیڈا کی 338 رکنی پارلیمان میں 24 نشستیں حاصل کر سکتی ہے۔اب تک کی اطلاعات کے مطابق ان انتخابات میں 65 فیصد افراد نے ووٹ ڈالے۔وفاقی انتخابات کو ٹروڈو کی قیادت پر ریفرینڈم کے طور پر دیکھا جا رہا تھا

    یہ بھی پڑھیں  عراق کے الصدر شہر میں پولیس اور مظاہرین میں تصادم

    کیونکہ ان کا پہلا دور حکومت بہت نشیب و فراز والا تھا اور وہ اس دوران کئی سکینڈلز کی زد میں رہے۔انھوں نے مانٹریال میں جشن منانے والے اپنے حامیوں سے کہا: ‘دوستوں تم نے کر دکھایا۔ مبارک باد!’اپنے ووٹرز کو مخاطب کرتے ہوئے انھوں نے کہا: ‘ملک کو صحیح سمت میں لے جانے کے لیے ہم لوگوں پر اعتماد دکھانے کے لیے شکریہ۔’اور جنھوں نے انھیں ووٹ نہیں دیا، ان کے لیے انھوں نے وعدہ کیا کہ ان کی پارٹی سب کے لیے حکومت کرے گی۔نیو ڈیموکریٹک پارٹی (این ڈی پی) کی سیٹوں میں بڑی کمی دیکھی گئی لیکن اس کے رہنما جگمیت سنگھ کنگ میکر یعنی حکومت ساز بن سکتے ہیںاقتدار پر ان کی کمزور گرفت کو ان کے ریکارڈ پر ایک دھچکے کے طور پر دیکھا جا رہا ہے

    یہ بھی پڑھیں  بھارت سے مذاکرات کا کوئی فائدہ نہیں:عمران خان
    یہ بھی پڑھیں  اسرائیل کی دھمکی ، حزب اللہ، لبنان کی فوج اور حکومت کو مشورہ دیتے ہیں کہ وہ ہمارا امتحان نہ لیں

    جبکہ انتخابات کے نتائج کنزرویٹو لیڈر اینڈریو شیئر کے لیے انتہائی مایوس کن رہے۔جسٹن ٹروڈو نے سنہ 2015 میں ‘حقیقی تبدیلی’ اور ترقی پسند عہد کے نام پر بڑی کامیابی حاصل کی تھی۔لیکن چار سال تک اقتدار میں رہنے کے بعد مسٹر ٹروڈو کو ان کی صلاحیت میں کمی کے لیے تنقید کا نشانہ بنایا گیا۔مثال کے طور پر ماحولیات کے تحفظ کے لیے ان کے ریکارڈ کو ٹرانس ماؤنٹین آئل پائپ لائن کے توسیعی منصوبے کی حمایت سے نقصان پہنچا ہے۔اور ٹروڈو اپنے وفاقی سطح پر انتخابی اصلاحات کے وعدے سے فوراً ہی دستبردار ہوگئے تھے جس سے متبادل ووٹنگ نظام دیکھنے کے خواہشمند بائیں بازو کے ووٹرز میں اشتعال پھیلا تھا۔

    مگر اس کے باوجود دو درجن کینیڈین محققین کے ایک آزادانہ جائزے کے مطابق ٹروڈو نے مکمل یا جزوی طور پر ان میں سے 92 فیصد وعدوں کی پاسداری کی ہے جو کہ گزشتہ 35 سال میں کسی بھی کینیڈین حکومت سے زیادہ ہے۔ٹروڈو کی انتخابات میں کامیابی کے امکانات اس وقت بھی کم نظر آنے لگے تھے جب تین مختلف مواقع پر ان کی سیاہ میک اپ کی ہوئی تصاویر وائرل ہوئی تھیں۔ان تصاویر کو ٹروڈو کے ‘تمام طبقات کے لیے ہمدرد’ کے پروان چڑھائے گئے سیاسی تشخص کے لیے بڑا دھچکا تصور کیا گیا تھا۔

    یہ بھی پڑھیں  یوکرینی طیارے کا بلیک باکس واپس کرنے کے لیے ایران پر دباؤ میں اضافہ

    LEAVE A REPLY

    Please enter your comment!
    Please enter your name here
    یہ بھی پڑھیں  عراق کے الصدر شہر میں پولیس اور مظاہرین میں تصادم

    Latest news

    میرٹ کی بنیادپر منتخب ہونے والے 670طلباء میں ہندوطلباء بھی شامل

    تعلیمی سال 2021-2022کے لئے جمعیۃعلماء ہند کے وظائف جاری ، مذہب سے اوپر اٹھ کر کام کرنا تو جمعیۃعلماء...

    آدیش گپتا نے اپنے بیٹوں کے ساتھ مل کر ایم سی ڈی کی زمین پر اپنا سیاسی دفتر بنایا: درگیش پاٹھک

    نئی دہلی : عام آدمی پارٹی کے ایم سی ڈی انچارج درگیش پاٹھک نے کہا کہ بی جے پی...

    مغربی يو پی : راشٹریہ لوک دل اور سماج وادی پارٹی اتحاد کتنا مضبوط ؟

    مغربی یوپی : مظفر نگر فسادات کے بعد مغربی یوپی میں بالخصوص پوری ریاست میں بالعموم فرقہ واریت اور...

    صوبائی کنونشن میں رئیس الدین رانا کو ”حفیظ میرٹھی ایوارڈ“ ملنے پر ایسوسی ایشن نے کیا استقبال

    مظفر نگر : اردو ٹیچرز ویلفیئر ایسوسی ایشن مظفر نگر کے عہدیداران نے آج صوبائی نائب صدر رئیس الدین...

    اسمبلی الیکشن : سوشل میڈیا کے چاروں پلیٹ فارموں پر سرگرم

    لکھنؤ : ملک کی سیاسی سمت کو طے کرنے والے صوبے اترپردیش میں کورونا بحران کے درمیان ہورہے اسمبلی...

    میرے والد اعظم خان کی جان کو خطرہ : عبد اللہ اعظم

    عبد اللہ اعظم نے کہا کہ کورونا پروٹوکول کے نام پر لوگوں کا استحصال کیا جا رہا ہے، گھر...

    Must read

    You might also likeRELATED
    Recommended to you