رازداری پالیسی

ہمارے بارے میں

رابطہ

  • عالمی نیوز
  • ہوم

    Hindi

    Epaper Urdu

    YouTube

    Facebook

    Twitter

    Mobile App

    صدرٹرمپ نے وائرس پر قابو پانے کے لیے15 روزہ منصوبہ پیش کیا

    واشنگٹن: کرونا وائرس کو ‘کووِڈ 19’ کا نام دیا گیا ہے اور عالمی ادارہ صحت نے اسے عالمی وبا قرار دیا ہے۔150 سے زیادہ ممالک میں کرونا وائرس کے ایک لاکھ 80 ہزار سے زائد کیسز رپورٹ ہو چکے ہیں جبکہ سات ہزار سے زائد ہلاکتیں ہوچکی ہیں۔وائرس کا پھیلائوروکنے کے لیے شہروں کو بند کیا جارہا ہے، قرنطینہ مراکز بنائے جارہے ہیں اور عوامی اجتماعات پر پابندیاں لگائی جارہی ہیں۔چین میں کیسز میں کمی ا?رہی ہے جبکہ امریکہ اور یورپی ممالک میں وبا تیزی سے پھیل رہی ہے۔پاکستان میں کرونا وائرس کے 184 کیسز رپورٹ ہوچکے ہیں۔امریکہ کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کرونا وائرس کے پیش نظر ملک میں ایمرجنسی لگانے کا اعلان کیا ہے اور 50 ارب ڈالرز کا فنڈ مختص کیا ہے۔امریکی ایئرپورٹس پر اسکریننگ کی وجہ سے بیرونِ ملک سے آنے والے مسافروں کو کئی کئی گھنٹے انتظار کرنا پڑ رہا ہے۔امریکہ نے یورپ سے صرف اْن مسافروں کو واپس آنے کی اجازت دی ہے جن کے پاس امریکی شہریت یا گرین کارڈ ہیں۔ جن لوگوں میں وائرس کی علامات پائی گئیں، انھیں 14 روز قرنطینہ میں رکھنے کے بعد گھر جانے کی اجازت دی جائے گی۔

    وبائی امراض کے امریکی ماہر ڈاکٹر انتھونی فاؤچی نے کہا ہے کہ کرونا وائرس کا پھیلاؤ روکنے کے لیے عارضی لاک ڈاؤن کی ضرورت پڑ سکتی ہے۔صدر ٹرمپ نے وائٹ ہاؤس میں میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ امریکی عوام کو مل کر کروناوائرس پر قابو پانے کے لیے کام کرنا ہو گا۔ انہوں نے کہا ہے کہ اس کے لیے آپ کو 15 روز تک صحت سے متعلق ہدایات پر عمل کرنا ہو گا۔صدرٹرمپ کا کہنا تھا کہ اب وقت آ گیا ہے کہ تمام امریکی اس وبا کا مقابلہ کرنے کے لیے اکھٹے ہو جائیں جو قابو سے باہر ہوتی جا رہی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ حکومت اس سلسلے میں ٹھوس اقدامات کر رہی ہے، لیکن ان کوششوں کو کامیاب کرنے کے لیے عوام کے بھرپور تعاون کی ضرورت ہے۔ٹرمپ نے وائرس پر قابو پانے کے لیے جو 15 روزہ منصوبہ پیش کیا وہ یہ ہے۔ا-دس سے زیادہ افراد کے اجتماع سے گریز کیا جائے۔2- ہوٹلوں ، ریستورانوں اور فوڈ کورٹس میں کھانا کھانے سے احتراز کیا جائے۔3- بارز میں اکھٹے ہونے سے اجتناب کیا جائے۔4- بڑی عمر کے افراد اور وہ لوگ جو مختلف نوعیت کی بیماریوں میں مبتلا ہیں، اپنا زیادہ تر وقت گھر پر گزاریں۔5- نوجوان بھی یہ کوشش کریں کہ انہیں باہر نکلنے کی ضرورت کم پڑے۔6- سکولوں میں جانے کی بجائے اپنی پڑھائی گھر میں رہ کر جاری رکھ۔ی جائے۔پاکستان کے معاون خصوصی برائے صحت کے مطابق ملک میں کرونا وائرس کے مصدقہ مریضوں کی تعداد 94 ہو چکی ہے تاہم صوبوں کی جانب سے جاری ہونے والے اعداد و شمار کے مطابق یہ تعداد 130 سے زائد ہے۔

    یہ بھی پڑھیں  جنگلات میں لگنے والی آگ سے دنیا بھر میں پینے کے پانی کی قلت کا خدشہ
    یہ بھی پڑھیں  جنگلات میں لگنے والی آگ سے دنیا بھر میں پینے کے پانی کی قلت کا خدشہ

    وفاق اور صوبوں کی سطح پر کرونا وائرس کے مصدقہ افراد کی تعداد کے حوالے سے اعداد و شمار کا فقدان دکھائی دیتا ہے۔معاون خصوصی صحت سے جب یہ سوال پوچھا گیا تو انہوں نے جواب دیا کہ اس وقت (پیر کی رات) تک مصدقہ مریضوں کی تعداد 94 ہے اور یہ اعداد و شمار تبدیل ہوتے رہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ بہت سے متاثرہ افراد کے میڈیکل ٹیسٹ کے نتائج آ رہے ہوتے ہیں اور بعض کی دوبارہ تصدیق ہونا باقی ہوتی ہے۔نیشنل کوآرڈینیشن کمیٹی کے وزیر اعظم کی زیر صدارت ہونے والے اجلاس کے بعد معاون خصوصی برائے صحت جس وقت میڈیا کو کرونا وائرس کے تازہ اعداد و شمار سے آگاہ کر رہے تھے، عین اسی وقت خیبر پختونخوا کے صوبائی وزیر صحت نے ٹوئٹ کے ذریعے بتایا کہ صوبے میں 15 افراد میں کرونا وائرس کی تشخیص ہوئی ہے۔وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ کے مطابق ان کے صوبے میں کرونا کے مریضوں کی تعداد 104 ہو گئی ہے جن میں سکھر میں 76، کراچی میں 27 اور حیدراباد میں ایک کیس رپورٹ ہوا ہے۔صوبوں کی طرف سے فراہم کردہ اعداد و شمار کے مطابق سندھ میں 104، خیبر پختونخوا میں 15، بلوچستان میں 10، گلگت بلتستان میں پانچ، پنجاب میں ایک، جب کہ اسلام آباد میں چار افراد کے اس وبا سے متاثر ہونے کی تصدیق ہوئی ہے۔امریکہ کی ریاست نیو جرسی میں کرونا وائرس کے مزید 80 نئے کیسز سامنے آنے کے بعد ریاست میں کرفیو نافذ کر دیا گیا ہے۔

    یہ بھی پڑھیں  کورونا وائرس سے دنیا میںدہشت کا ماحول، 170 سے زائدا موات

    نیو جرسی میں کرونا وائرس کے کیسز کی مجموعی تعداد 178 ہو گئی ہے۔ گورنر فل مرفی نے کرونا وائرس کو مزید پھیلنے سے روکنے کے لیے ریاست میں کرفیو کے نفاذ کا اعلان کیا ہے۔ انہوں نے اپنے ایک ٹوئٹ میں شہریوں پر زور دیا کہ وہ ایک دوسرے سے فاصلہ اختیار کریں اور غیر ضروری طور پر گھروں سے باہر نہ نکلیں۔اقوامِ متحدہ کے ادارہ برائے مہاجرین ‘یو این ایچ سی آر’ نے کرونا وائرس سے بچاؤ کے احتیاطی اقدامات کے تحت پاکستان اور افغانستان کی سرحدوں کی بندش کے بعد افغان مہاجرین کی رضا کارانہ واپسی کا عمل عارضی طور پر معطل کر دیا ہے۔یو این ایچ سی آر پاکستان کے منگل کو جاری بیان کے مطابق صوبہ خبیر پختونخوا میں نوشہرہ اور صوبہ بلوچستان میں کوئٹہ کے قریب قائم رضاکارانہ واپسی کے مراکز کو بند کر دیا گیا ہے۔یو این ایچ سی آر کے پاکستان میں نائب مندوب لین ہال نے کہا ہے کہ ادارے کی اوّلین ترجیح کرونا وائرس کا پھیلاؤ روکنے کے لیے عالمی کوششوں کی حمایت کرنا ہے۔ اس ضمن میں وہ پاکستان کی جانب سے کیے گئے اقدامات کی حمایت کرتے ہیں۔یو این ایچ سی آر کے مطابق مارچ 2020 میں افغان مہاجرین کی واپسی کا عمل دوبارہ شروع ہونے کے بعد نو خاندانوں کے 28 افراد افغانستان واپس جا چکے ہیں جب کہ 14 لاکھ رجسٹرڈ افغان مہاجرین پاکستان میں مقیم ہیں۔

    یہ بھی پڑھیں  سعودی عرب میں طلاق کی شرح میں اضافہ

    LEAVE A REPLY

    Please enter your comment!
    Please enter your name here
    یہ بھی پڑھیں  کورونا وائرس سے دنیا میںدہشت کا ماحول، 170 سے زائدا موات

    Latest news

    دہلی میں 5-ٹی پلان کو عمل میں لاکر جیتیں گے کورونا سے جنگ : اروند کیجریوال

    نئی دہلی : دہلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال نے کہا کہ ہمیں ہمیشہ سے کورونا کو شکست دینے...

    میڈیا کی متعصبانہ رپورٹنگ کے خلاف جمعیة علماء ہند سپریم کورٹ میں

    نئی دہلی:ملک کے بے لگام ٹی وی چینلوں پر قانونی لگام لگانے کی پہل جمعیةعلماءہند نے کردی گزشتہ روز...

    مرکزی حکومت نے 27 ہزار پی پی ای کٹس مختص کیں: اروند کیجریوال

    نئی دہلی: دہلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال نے کہا کہ ہم دہلی میں کسی کو بھوکا سونے نہیں...

    کورونا وائرس پوری دنیا میں قہر بن کر ٹوٹ رہاہے : مولانا ارشد مدنی

    دیوبند: جمعیۃ علماء ہند کے قومی صدر مولانا سید ارشد مدنی نے کہاکہ کورونا وائرس پوری دنیا میں قہر...

    سات نئے کورونا کے مثبت معاملے ملنے سے مچا ہڑکمپ

    لکھنؤ:راجدھانی میں کورونا مثبت پائے گئے مریضوں کی تعداد میں کوئی بھی کمی نہیں آرہی ہے۔سات نئے معاملے سامنے...

    معـــاشرتی ، مــذہبی اور عــــلاقائی اختــلاف سے بالاتر ہوکر ہی کـــوویڈ 19 سےجیتی جاسکتی ہے جنـــــــگ : پروفیســــر احــــرار حســـــین

    نئی دہلی : سنٹر فار ڈسٹنس اینڈ اوپن لرننگ، جامعہ ملیہ اسلامیہ کے ڈائریکٹر (اکیڈمک) پروفیسر احرار حسین نےکہاکہ...

    Must read

    You might also likeRELATED
    Recommended to you