رازداری پالیسی

ہمارے بارے میں

رابطہ

  • عالمی نیوز
  • ہوم

    Hindi

    Epaper Urdu

    YouTube

    Facebook

    Twitter

    Mobile App

    یونیسیف :کنونشن آن دی رائٹس آف چائلڈ کے 30 سال مکمل

    نیویارک : جنوبی ایشیا میں کم عمری کی شادیوں کے حوالہ سے اقوام متحدہ کی ایک رپورٹ میں بتایا گیاہے کہ خطہ میں اس عمر کی شادیوں کی شرح انسٹھ فیصد سے کم ہوکر تیس فیصد ہوگئی ہے ۔یونیسیف کی جانب سے کنونشن آن دی رائٹس آف چائلڈ کے 30 سال مکمل ہونے پر جاری کی گئی جو تاریخ میں انسانی حقوق کا وسیع ترین معاہدہ ہے ۔
    رپورٹ میں گزشتہ 30 برس میں دنیا بھر کے بچوں سے متعلق تاریخی کامیابیوں کو اجاگر کیا گیا لیکن یہ نشاندہی بھی کی گئی اکثر غریب ترین بچوں تک اس کے ثمرات نہیں پہنچے ۔
    گزشتہ 3 دہائیوں میں پرائمری اسکول کی تعلیم سے محروم بچوں کی تعداد میں 40 فیصد سے زائد کمی آئی ہے ۔
    30 برس قبل پولیو کے نتیجے میں روزانہ ایک ہزار بچے معذور یا جاں بحق ہوجاتے تھے ، آج ان میں سے 99 فیصد کیسز کا خاتمہ کیا جاچکا ہے ۔
    تاہم رپورٹ میں بچوں کے حقوق کے خاص طور پر کمزور طبقے کے حوالے سے نمایاں رکاوٹوں کی بھی نشاندی کی گئی، پانچ برس سے کم عمر 15 ہزار بچے اب بھی ان بیماریوں کا شکار ہوکر مرجاتے ہیں جن میں زیادہ تر قابل علاج ہیں اور دیگر کی روک تھام کے اسباب موجود ہیں۔
    اسی طرح دنیا بھر کے بچوں کی بقا اور کامیابی کے نئے خطرات جیسا کہ موسمیاتی تبدیلی اور آن لائن ڈرانے یا دھمکیوں کا بھی سامنا ہے ۔
    رپورٹ میں بچوں کی صحت اور زندگی کو تعلیم تک رسائی اور خطرناک عوامل سے بچوں کے تحفظ میں اضافے کے جائزے پر مبنی حوالے سے کامیابیوں کی نشاندہی کی گئی۔
    1990 میں پرائمری اسکول کی عمر کے 20 فیصد بچے اسکول نہیں جاتے تھے اب یہ تناسب عالمی سطح پر 10 فیصد سے بھی کم ہے ۔
    پرائمری تعلیم تک رسائی میں صنفی فرق افریقہ، مشرق وسطیٰ اور جنوبی ایشیا کے علاوہ اکثر ممالک میں بڑے پیمانے پر ختم ہوچکا ہے ۔
    اسی طرح بچوں کے حقوق کے حوالے سے نئے خطرات بھی سامنے آرہے ہیں اور والدین معمول کے حفاظتی ٹیکوں کی اہمیت پر بھی شک کررہے ہیں۔
    علاوہ ازیں دیگر چیلنجز میں اکثر حکومتوں اور عوام کے درمیان بچوں کے حقوق کے حوالے سے اطمینان، جنوبی ایشیا اور افریقہ کے کم اور متوسط آمدن کے ممالک میں نوجوان افراد کی آبادی میں اضافہ شامل ہے ۔
    رپورٹ میں پرائمری تعلیم میں اضافے کو گزشتہ 3 دہائیوں میں بچوں اور نوجوانوں کے متعلق اہم کامیابی کے طور پر نشاندہی کی گئی ہے ۔

    یہ بھی پڑھیں  تمباکو نوشی سےامریکہ میں 24 کی موت

    LEAVE A REPLY

    Please enter your comment!
    Please enter your name here
    یہ بھی پڑھیں  سال2020 کے آخر تک دنیا میں تقریبا 97 لاکھ بچے مستقل طور پر اسکول چھوڑ سکتے ہیں

    Latest news

    کیجریوال حکومت کے بروقت لاک ڈاؤن نے دہلی میں کوویڈ 19 میں انفیکشن کی شرح کو کم کردیا

    نئی دہلی : دہلی حکومت کی کاوشوں اور بہتر کوویڈ انتظامیہ کی وجہ سے ، انفیکشن کی شرح میں...

    پچھلے سال دہلی حکومت نے آٹو اور ٹیکسی ڈرائیوروں کو 5-5 ہزار روپے دے کر مدد کی تھی: اروند کیجریوال

    نئی دہلی: دہلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال کی سربراہی میں ، مالی تنگدستیوں سے نبرد آزما غریب خاندانوں...

    دارالعلوم دیوبند کے استاذ عربی مولانا نورعالم امینی کے سانحہ ارتحال پر صدرجمعیۃعلماء ہند وصدرالمدرسین دارالعلوم دیوبند مولانا ارشدمدنی نے کیا رنج وغم...

    نئی دہلی : دارالعلوم دیوبند کے استاذعربی مولانا نورعالم امینی کے سانحہ ارتحال پر صدرجمعیۃعلماء ہند وصدرالمدرسین دارالعلوم دیوبند...

    نوجوانوں میں ویکسینیشن کا جوش و خروش، بڑے پیمانے پر ویکسینیشن کی وجہ سے کورونا ہاریگا : نائب وزیر اعلی

    نئی دہلی : دہلی حکومت نے پیر سے 18 سے 45 سال کے درمیان لوگوں کے لئے مفت کورونا...

    کورونا کا قہر جاری عوام کی رائے سے دہلی میں ایک ہفتہ کےلئے اور لاک ڈاؤن بڑھایا جارہا ہے : اروند کیجریوال

    کورونا کا انفیکشن 37 سے گھٹ کر 30 فیصد ہوگیا ہےلیکن یہ نہیں کہا جاسکتا کہ کورونا ختم ہونے...

    94 سالہ شخص کو سپریم کورٹ نے عبوری راحت دی

    جولائی تک پیرول میں توسیع کردی، 27 سال بعد گھر پر عید منا سکیں گے ڈاکٹر حبیب : گلزار...

    Must read

    You might also likeRELATED
    Recommended to you