رازداری پالیسی

ہمارے بارے میں

رابطہ

  • قومی نیوز
  • ہوم

    Hindi

    Epaper Urdu

    YouTube

    Facebook

    Twitter

    Mobile App

    سی سی ٹی وی سے کی جا رہی ہے کی شناخت 250 سے زیادہ لوگوں پر قومی سلامتی ایکٹ کی تیاری

    لکھنو: شہریت ترمیم ایکٹ- 2019 کی مخالفت میں جمعرات کو شروع ہوئے ہنگامہ آرائی کے کچھ واقعات کو چھوڑ کر اب انتظامیہ نے کنٹرول کر لیا ہے۔ اب اس ہنگامے سے ہوئے نقصان، فسادیوں کی شناخت اور قومی سلامتی ایکٹ کی تیاری چل رہی ہے۔ احتیاط کے طور پر اب بھی دارالحکومت سمیت یوپی کے 15 اضلاع میں انٹرنیٹ خدمات معطل ہیں۔ لکھنو میں ہوئے ہنگامے میں پانچ کروڑ روپے کے نقصان کا اندازہ لگایا گیا ہے۔ اس دوران 250 سے زیادہ فسادیوں پر قومی سلامتی ایکٹ لگانے کی تیاری ہے۔ فسادیوں کے خلاف سختی سے نمٹنے کے لئے سی ایم کے سخت ہدایات کے بعد پولیس نے گرفتاری بھی تیز کر دی ہے۔ سی سی ٹی وی سے دیکھ کر فسادیوں کی شناخت کی جا رہی ہے۔

    شہریت ترمیم قانون کے خلاف ہفتہ کو رامپور میں جہاں پرتشدد مظاہروں کے دوران ایک شخص نے دم توڑ دیا، وہیں پولیس اہلکاروں سمیت 15 لوگ زخمی ہیں۔ کانپور سنبھل، امروہہ، مظفرنگر اور فیروز آباد میں بھی مظاہرہ اور پتھراو¿ کی خبریں آئیں۔ فیروز آباد میں پتھراو کے دوران ایس ایس پی، ایس پی سٹی، سٹی مجسٹریٹ، CO سٹی سمیت متعدد داروغہ اور سپاہی زخمی ہو گئے۔ یوپی کے لکھنو سمیت 15 اضلاع میں انٹرنیٹ اور ایس ایم ایس خدمات پیر تک معطل رہیں گی۔ یوپی میں تشدد میں اب تک مرنے والوں کی تعداد 18 ہو گئی ہے۔

    یہ بھی پڑھیں  زمینی سطح پر مہم کو موثر طریقے سے نافذ کرنے کے لئے تمام ایس ڈی ایم ، پولیس افسران اور ڈی پی سی سی کی 11 ٹیموں کو ہدایات دی گئی ہیں: گوپال رائے
    یہ بھی پڑھیں  پہلا روزہ رکھ کر کورونا وائرس کے خاتمے کے لئے مانگی د‌عا

    پولیس نے اب تک 11000 فسادیوں کے خلاف کارروائی کی ہے، 748 سے زیادہ لوگ گرفتار ہو چکے ہیں۔ 4500 پر کارروائی کی گئی ہے۔ 265 پولیس اہلکار زخمی ہوئے ہیں اور 415 طمنچے برآمد ہوئے ہیں۔ 13104 لوگوں کے خلاف متنازعہ پوسٹ ڈالنے پر کارروائی کی گئی ہے۔ اس معاملے میں 63 سے زیادہ ایف آئی آر درج کی گئیں اور 442 لوگوں پر پابندی لگا دی گئی۔

    یوپی پولیس نے فسادیوں کی شناخت کرکے انہیں جرمانہ وصولی کا نوٹس بھیجنا شروع کر دیا ہے۔ جرمانہ نہیں ادا کرنے پر پراپرٹی قرق ہوگی۔ فسادیوں کی شناخت سی سی ٹی وی فوٹیج سے کی جا رہی ہے۔ ادھر، لکھنو تشدد کے معاملے میں پھنسے بہت سے لوگوں کا مغربی بنگال سے کنکشن سامنے آیا ہے۔ پولیس ذرائع کے مطابق لکھنو میں تشدد کے دوران انہیں بنگال سے بلایا گیا تھا۔ پولیس ڈائریکٹر جنرل اوم پرکاش سنگھ نے بتایا کہ مظاہرے میں این جی او اور بیرونی عناصر شامل ہو سکتے ہیں۔ ہم چیک کرا رہے ہیں اور کسی کو بخشا نہیں جائے گا۔

    یہ بھی پڑھیں  کجریوال نے بجلی کمپنیوں کیساتھ مل کر دس ہزار کروڑ روپیہ کاکیاگھوٹالہ: سبھاش چوپڑہ

    LEAVE A REPLY

    Please enter your comment!
    Please enter your name here
    یہ بھی پڑھیں  خواتین کے سفر کو مفت کرنا دہلی حکومت کا ایک اہم قدام

    Latest news

    میرٹ کی بنیادپر منتخب ہونے والے 670طلباء میں ہندوطلباء بھی شامل

    تعلیمی سال 2021-2022کے لئے جمعیۃعلماء ہند کے وظائف جاری ، مذہب سے اوپر اٹھ کر کام کرنا تو جمعیۃعلماء...

    آدیش گپتا نے اپنے بیٹوں کے ساتھ مل کر ایم سی ڈی کی زمین پر اپنا سیاسی دفتر بنایا: درگیش پاٹھک

    نئی دہلی : عام آدمی پارٹی کے ایم سی ڈی انچارج درگیش پاٹھک نے کہا کہ بی جے پی...

    مغربی يو پی : راشٹریہ لوک دل اور سماج وادی پارٹی اتحاد کتنا مضبوط ؟

    مغربی یوپی : مظفر نگر فسادات کے بعد مغربی یوپی میں بالخصوص پوری ریاست میں بالعموم فرقہ واریت اور...

    صوبائی کنونشن میں رئیس الدین رانا کو ”حفیظ میرٹھی ایوارڈ“ ملنے پر ایسوسی ایشن نے کیا استقبال

    مظفر نگر : اردو ٹیچرز ویلفیئر ایسوسی ایشن مظفر نگر کے عہدیداران نے آج صوبائی نائب صدر رئیس الدین...

    اسمبلی الیکشن : سوشل میڈیا کے چاروں پلیٹ فارموں پر سرگرم

    لکھنؤ : ملک کی سیاسی سمت کو طے کرنے والے صوبے اترپردیش میں کورونا بحران کے درمیان ہورہے اسمبلی...

    میرے والد اعظم خان کی جان کو خطرہ : عبد اللہ اعظم

    عبد اللہ اعظم نے کہا کہ کورونا پروٹوکول کے نام پر لوگوں کا استحصال کیا جا رہا ہے، گھر...

    Must read

    You might also likeRELATED
    Recommended to you