رازداری پالیسی

ہمارے بارے میں

رابطہ

  • قومی نیوز
  • ہوم

    Hindi

    Epaper Urdu

    YouTube

    Facebook

    Twitter

    Mobile App

    اسمبلی الیکشن : سوشل میڈیا کے چاروں پلیٹ فارموں پر سرگرم

    لکھنؤ : ملک کی سیاسی سمت کو طے کرنے والے صوبے اترپردیش میں کورونا بحران کے درمیان ہورہے اسمبلی انتخابات میں ورچول ذرائع سے انتخابی تشہیر کرنے کی لازمیت کی وجہ سے سیاسی پارٹیوں کی تکنیکی اہلیت کا بھی سخت امتحان ہورہا ہے۔

    عالمی وبا کووڈ19کی تیسری لہر کی وجہ سے الیکشن کمیشن کے ذریعہ عوامی ریلیوں و دیگر پروگراموں میں پابندی عائد کئے جانے کے بعد 7 مراحل میں منعقد ہونے والے انتخابات میں سوشل میڈیا کا کردار فیصلہ کن کردار ادا کرنے کی حیثیت اختیار کرچکا ہے۔بی جے پی،عام آدمی پارٹی(اے اے پی)، سماج وادی پارٹی(ایس پی) اور کانگریس نے انفارمیشن ٹیکنالوجی کی اہمیت کو سمجھتے ہوئے اپنے پارٹی دفاتر پر باقاعدہ وار روم بنا رکھے ہیں۔ ان میں تکنیک اور سیاسی ماہرین کی تربیت یافتہ ٹیمیں موجود ہیں۔

    ان کی مدد سے وہاٹس ایپ، فیس بک اور انسٹاگرام پر بوتھ سطح تک بنے سینکڑوں ہزاروں گروپ کے ذریعہ ووٹروں کے دل و دماغ پر قبضہ کرنے کی حکمت عملی پر کام چل رہا ہے۔تاہم ڈیجیٹل جنگ میں بی جے پی نے دوسری پارٹیوں پرفوقیت حاصل کر رکھی ہے ۔اس بات کا حال ہی میں ایس پی صدر اکھلیش یادو نے کھلے عام اعتراف کرتے ہوئے کہا تھا کہ بی جے پی فی الحال ڈیجیٹل جنگ میں کافی آگے ہے۔

    سیاسی تجزیہ کاروں کے مطابق ایس پی صدر کے ایماندارانہ اعتراف کو اس نقطہ نظر سے سمجھا جا سکتا ہے کہ بی جے پی نے 5 سال پہلے ہی ڈیجیٹل انتخابی تشہیر اور خود کو ورچوئل ڈائیلاگ کے طور پر کھڑا کرنے کی بنیا رکھ دی تھی۔ اس کیلئے پارٹی نے بوتھ لیول تک کارکنوں کی تربیت بھی شروع کردی تھی، جس کا نتیجہ آج انتخابات میں صاف نظر آرہا ہے۔

    ایس پی کے ایک سینئر لیڈر نے کہا کہ ایس پی ڈیجیٹل لڑائی میں میں بی جے پی سے قطعی پیچھے نہیں ہے۔ پارٹی کی ورچوئل میٹنگیں ہو رہی ہیں۔ ان میں زمینی سطح کے کارکنوں سے بہتر رابطہ قائم کیا جا رہا ہے ۔ پارٹی کی حکمت عملی کو شیئر کرنے میں ڈیجیٹل پلیٹ فارم کی اہمیت سامنے آرہی ہے۔ وہیں فیس بک، یوٹیوب اور وہاٹس ایپ کے ذریعے پارٹی کہ ہر چھوٹے بڑے واقعہ یا اطلاعات کو شیئر کیا جا رہا ہے۔

    یہ بھی پڑھیں  کشمیر 116:اضطرابی کیفیت سایہ فگن، صورتحال جوں کی توں برقرار

    پارٹی کے صدر اکھلیش یادو اور دیگر عہدیدار طویل عرصے سے ٹوئٹر پر سرگرم ہیں۔ انفارمیشن ٹیکنالوجی (آئی ٹی) کے ماہرین کے مطابق موجودہ اسمبلی انتخابات میں فیس بک لائیو، یوٹیوب، انسٹاگرام اور وہاٹس ایپ کا کردار کسی بھی سیاسی جماعت کے حق میں ہوا بنانے میں کافی اہم ہو سکتا ہے۔ بی جے پی،اے اے پی، ایس پی اور کانگریس نے باقاعدہ طور پر اپنے ’ڈیجیٹل وار روم‘ بنارکھے ہیں، جہاں ان کی آئی ٹی سیل کی ٹیم ان وسائل کا بہترین استعمال کر رہی ہے ۔

    یہ بھی پڑھیں  سی اے اے کی مخالفت میں اٹاوہ بھی بنا دہلی کا شاہین باغ

    وہیں کئی چھوٹی پارٹیوں نے اپنی اس مہم کو آگے بڑھانے کیلئے ڈیجیٹل اشتہاری ایجنسیوں کی مدد لی ہے ۔ یہ ایجنسیاں نہ صرف یوٹیوب لائیو کیلئے مطلوبہ کم از کم 1000سبسکرائبرز بنانے میں مدد کرتی ہیں، بلکہ اشتہارات کے ذریعے پارٹی کے کلپس کو مفت یوٹیوب سبسکرائبرز کو دیکھنے کیلئے مجبور کرتی ہیں۔

    ایک اندازے کے مطابق ریاست میں تقریباً 70فیصد رائے دہندگان سیل فون اور انٹرنیٹ استعمال کرتے ہیں۔ ہر پارٹی کا مقصد سوشل میڈیا کے ان پلیٹ فارمس کے ذریعے ووٹرز کے دل و دماغ پر قبضہ کرنا ہے۔ تاہم ان میں یوٹیوب اسٹریم اور وہاٹس ایپ کا کردار اس لیے بھی زیادہ اہم ہو جاتا ہے، کیونکہ یہ دونوں پلیٹ فارم سب سے زیادہ استعمال ہوتے ہیں اور ان کیلئے زیادہ تکنیکی مہارت کی ضرورت بھی نہیں ہوتی۔

    یوٹیوب ایپلی کیشن ہر کسی کیلئے مفت دستیاب ہے اور اس کا ڈیٹا ریٹ بھی کم ہے ، یعنی انٹرنیٹ کی رفتار کم ہونے پر بھی ’نیٹ سرفنگ‘کی جا سکتی ہے ۔

    اپنے چینل کو لائیو بنانے کیلئے کم از کم ایک ہزار سبسکرائبرز کی ضرورت ہے، جسے ڈیجیٹل پروموشن ایجنسیوں کی مدد سے آسانی سے پورا کیا جا سکتا ہے۔ ایک بار چینل کے لائیو ہونے کے بعد، پارٹی کو صرف اپنے کارکنوں کے درمیان لنک شیئر کرنا ہوتا ہے اور دلچسپی رکھنے والے لوگ اس میں شامل ہوتے رہتے ہیں جس سے سیاسی جماعت کا لیڈر یا امیدوار ہزاروں لاکھوں لوگوں تک اپنی بات آسانی سے پہنچا سکتاہے ۔

    یہ بھی پڑھیں  ایس ڈی پی آی کا ’شہریت ترمیمی قانون ‘کے خلاف مظاہرہ

    بی جے پی کے سوشل میڈیا سیل سے وابستہ ایک عہدیدار نے بتایا کہ پارٹی سوشل میڈیا کے چاروں پلیٹ فارموں پر سرگرم ہے ۔ پارٹی کے ٹوئیڑ ہینڈل پر پر 2.9ملین سے زیادہ فالوورس ہیں جبکہ فیس بک پر اس کے 48لاکھ سے زیادہ فالوورس ہیں۔ بی جے پی کے پاس مقامی سطح پر انتخابی مہم چلانے کے لیے وار روم بھی ہیں۔کانگریس بھی ڈیجیٹل لڑائی میں ایس پی، بی جے پی اور عآپ سے پیچھے نہیں ہے ۔ اس کی مثال پارٹی جنرل سکریٹری پرینکا گاندھی واڈرا کی ورچوئل میٹنگوں اور یوٹیوب، فیس بک لائیو کے علاوہ ٹوئٹر کی شکل میں دیکھنے کو ملتی ہے ۔

    ان ورچوئل ذرائع سے وہ عوام الناس کے جم غفری کو پارٹی کے حق میں کی گئی باتوں کو سننے کے لئے راغب کرنے میں کامیاب رہی ہیں۔تاہم ، بی ایس پی اپنے حریفوں کے مقابلے ورچوئل انتخابی تشہیر میں پیچھے ہے ۔ بی ایس پی کے سینئر لیڈر ستیش چندر مشرا فی الحال لائیو ریلیوں کے انعقاد کے لئے فیس بک کا استعمال کر رہے ہیں، لیکن پارٹی میں اس کے حریف جماعتوں کے ذریعہ اپنائی گئی جارح سوشل میڈیا حکمت عملی کے مقابلے تھوڑی کمی ہے ۔عام آدمی پارٹی بھی بڑھتے کووڈ۔19معاملوں کے درمیان ڈیجیٹل میڈیا کے ذریعہ انتخابی مہم کی حامی ہے ۔

    راجیہ سبھا کے رکن سنجے سنگھ کا کہنا ہے کہ اگر عوام محفوظ ہیں تو انتخابات بھی ہوں گے ۔ 8جنوری کو وارانسی میں ایک ورچوئل ریلی میں سنجے سنگھ نے فیس بک، ٹوئٹر، انسٹاگرام اور یوٹیوب کے ذریعے لوگوں سے خطاب کیا۔

    یہ بھی پڑھیں  اجودھیا قضیہ : نظر ثانی کی اپیل دسمبر کے پہلے ہفتے میں

    سوشل میڈیا کے ماہرین کے مطابق جنہوں نے سال 2019میں سب سے زیادہ تیاری کی ہوگی انہیں اس الیکشن میں سب سے زیادہ فائدہ ہونے والا ہے ۔حالانکہ تمام سیاسی جماعتوں کا اپنا اپنا دعویٰ ہے کہ وہ ڈیجیٹل وار روم کے ذریعے نہ صرف مکمل طور سے الیکشن لڑنے کے لیے تیار ہیں بلکہ بہت تیزی سے آگے بھی بڑھ رہے ہیں۔ تقریباً تمام بڑی جماعتوں کے پاس نہ صرف آئی ٹی ماہرین ہیں بلکہ ان کی اپنی بڑی ٹیمیں بھی گزشتہ کئی سالوں سے انتخابی میدان میں مصروف عمل ہیں۔آئی ٹی کے شعبے میں کام کرنے والے اشوک کمار کا کہنا ہے کہ سیاسی جماعتوں کے بوتھ لیول تک کارکنوں کا کردار سوشل میڈیا کے حوالے سے اہم ثابت ہوگی۔

    یہ بھی پڑھیں  دہلی میں دوبارہ لاک ڈاؤن کرنے کا کوئی منصوبہ نہیں ہے : اروند کیجریوال

    کیونکہ وہ گروپ بنا کر اپنی پارٹی یا امیدوار کا لنک شیئر کریں گے جس سے لوگوں تک ان کی بات پہنچ سکے ۔ عالمی وبا کے اس دور میں جسمانی طور پر ملنا مشکل ہو سکتا ہے ۔ان کا دعویٰ ہے کہ ٹی وی چینل بھی ہر پارٹی کے ساتھ انصاف نہیں کر سکتے ۔ موجودہ دور میں ٹی وی سے کئی گنا زیادہ لوگ سوشل میڈیا کے شوقین ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ فیس بک اور یوٹیوب انتخابی مہم کے سب سے کم خرچ اور بہترین ذرائع بن کر ابھر رہے ہیں۔

    آئی ٹی ماہرین کے مطابق ا سمارٹ فون، سوشل میڈیا اور پاپولر میڈیا کے ذریعے ورچوئل ریلیوں اور انتخابی مہم کے آغاز کے بعد یہ مارکیٹ بڑھے گی اور نئی تکنیک یا آئیڈیاز آئیں گے ۔ سوشل میڈیا ٹیم کے لیے بھی اشتہاری کام کا ہدف بھی مقرر کیا جا رہا ہے ۔ حکمت سازوں کا ماننا ہے کہ ورچوئل ریلی کی توسیع زیادہ ہے اور اس میں کم وسائل کی بھی ضرورت ہوتی ہے ۔

    یہی نہیں، بڑے لیڈر اپنے گھروں سے یا دفاتر سے ہی عام لوگوں سے براہ راست خطاب کر سکتے ہیں۔سب سے بڑی بات یہ ہے کہ لوگوں کو انتظار نہیں کرنا پڑتاہے ۔ عام انتخابی ریلی کے مقابلے اس میں مقامی لوگوں کی شرکت بھی زیادہ ہوتی ہے ۔ ایسے میں اسمبلی انتخابات میں یہ موثر کردار ادا کر سکتا ہے ۔

    LEAVE A REPLY

    Please enter your comment!
    Please enter your name here
    یہ بھی پڑھیں  حاجی فضل الرحمن علیگ اور ملی کونسل سہارنپور وفد کی ڈی ایم اکھلیش سنگھ سے ملاقات

    Latest news

    میرٹ کی بنیادپر منتخب ہونے والے 670طلباء میں ہندوطلباء بھی شامل

    تعلیمی سال 2021-2022کے لئے جمعیۃعلماء ہند کے وظائف جاری ، مذہب سے اوپر اٹھ کر کام کرنا تو جمعیۃعلماء...

    آدیش گپتا نے اپنے بیٹوں کے ساتھ مل کر ایم سی ڈی کی زمین پر اپنا سیاسی دفتر بنایا: درگیش پاٹھک

    نئی دہلی : عام آدمی پارٹی کے ایم سی ڈی انچارج درگیش پاٹھک نے کہا کہ بی جے پی...

    مغربی يو پی : راشٹریہ لوک دل اور سماج وادی پارٹی اتحاد کتنا مضبوط ؟

    مغربی یوپی : مظفر نگر فسادات کے بعد مغربی یوپی میں بالخصوص پوری ریاست میں بالعموم فرقہ واریت اور...

    صوبائی کنونشن میں رئیس الدین رانا کو ”حفیظ میرٹھی ایوارڈ“ ملنے پر ایسوسی ایشن نے کیا استقبال

    مظفر نگر : اردو ٹیچرز ویلفیئر ایسوسی ایشن مظفر نگر کے عہدیداران نے آج صوبائی نائب صدر رئیس الدین...

    اسمبلی الیکشن : سوشل میڈیا کے چاروں پلیٹ فارموں پر سرگرم

    لکھنؤ : ملک کی سیاسی سمت کو طے کرنے والے صوبے اترپردیش میں کورونا بحران کے درمیان ہورہے اسمبلی...

    میرے والد اعظم خان کی جان کو خطرہ : عبد اللہ اعظم

    عبد اللہ اعظم نے کہا کہ کورونا پروٹوکول کے نام پر لوگوں کا استحصال کیا جا رہا ہے، گھر...

    Must read

    You might also likeRELATED
    Recommended to you