رازداری پالیسی

ہمارے بارے میں

رابطہ

  • قومی نیوز
  • ہوم

    Hindi

    Epaper Urdu

    YouTube

    Facebook

    Twitter

    Mobile App

    کالج کنٹریکچول لیکچرر ماہانہ مشاعروں میں کٹوتی سے دل برداشتہ

    سری نگر: انتظامیہ کی طرف سے ماہانہ مشاہرے میں اضافے کے بجائے کٹوتی جموں وکشمیر کے کالجوں میں کام کرنے والے کنٹریکچول لیکچرروں کے لئے باعث تشویش ہی نہیں بلکہ دل شکستگی اور افسردگی کا بھی سبب بن گیا ہے ۔ان کالج کیچرروں کا کہنا ہے کہ حکومت کی طرف سے مشاہرے میں کٹوتی ناانصافی ہی نہیں بلکہ ہمارے ساتھ بالخصوص اور اعلیٰ تعلیم یافتہ نوجوانوں کے ساتھ بالعموم استحصال کی آخری حد ہے ۔ بتادیں جموں کشمیر انتظامیہ نے کالجوں میں کام کرنے والے گزیٹڈ کنٹریکچول لیکچرروں کا ماہانہ مشاہرہ 28 ہزار روپے سے گھٹا کر 15 ہزار روپے مقرر کیا ہے جبکہ نان گزیٹد کنٹریکچول لیکچرروں کا ماہانہ مشاہرہ 22 ہزار روپے کے بجائے 12 ہزار روپے مقرر کیا ہے ۔

    ایک ڈگری کالج میں گزشتہ ایک برس سے کام کرنے والے ایک کنٹریکچول لیکچرر نے یو این آئی اردو کے ساتھ بات کرتے ہوئے کہا کہ انتظامیہ کی طرف سے ہمارے ماہانہ مشاہرے میں کٹوتی استحصال کی حد ہے جو کالجوں میں تدریسی عمل کے حد درجہ متاثر ہونے کا باعث بن سکتی ہے ۔انہوں نے کہا: ‘ہمارے ماہانہ مشاہرے کو بڑھانے کے بجائے گھٹایا گیا ہے ، یہ استحصال کی آخری حد ہے جس کے نتیجے میں ہم کالجوں کے بجائے سڑکوں پر دھرنا دینے پر مجبور ہوسکتے ہیں جو پھر کالجوں میں تدریسی عمل از حد متاثر ہونے کا باعث بن سکتا ہے ‘۔موصوف استاد نے کہا کہ ایک طرف حکومت دعویٰ کرتی ہے کہ آئینی دفعات 370 اور 35 اے کی تنسیخ سے جموں کشمیر میں ترقی ہوگی دوسری طرف ہم دیکھ رہے ہیں کہ عوام کش اقدام کئے جارہے ہیں۔

    یہ بھی پڑھیں  اگلے پانچ سالوں میں 24 گھنٹے پانی دیں گے: اروند کیجریوال
    یہ بھی پڑھیں  سیلم پور میں ڈرون سے نگرانی ، یوپی کے 21 اضلاع میں ہائی الرٹ

    انہوں نے کہا کہ جموں کشمیر کے کالج، کنڑیکچول لیکچرروں پر ہی منحصر ہیں اگر یہ لوگ بائیکاٹ کریں گے تو کالجوں میں تدریسی عمل بند ہوجائے گا۔موصوف استاد کا کہنا تھا کہ ماہانہ مشاہرے میں کٹوتی سے ہمیں سات برس پیچھے دھکیلا گیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ یہ تمام اعلیٰ تعلیم یافتہ نوجوانوں کے ساتھ استحصال کے مترداف ہے ، اس استحصال کے خلاف تمام اعلیٰ تعلیم یافتہ نوجوان سڑکوں پر آنے پر مجبور ہوں گے ۔ایک استاد، جو وادی کے ایک کالج میں گزشتہ پانچ برسوں سے بحیثیت کنٹریکچول لیکچرر کام کرتا ہے ، نے انتطامیہ کی طرف سے مشاہرے میں کٹوتی پر اظہار افسوس و تشویش کرتے ہوئے کہا: ‘یوں تو تمام سرکاری و نجی اداروں میں کام کرنے والے ملازمین کی تنخواہوں میں مہنگائی یا پرفارمنس کی بنیادوں پر تنخواہیں بڑھائی جاتی ہیں لیکن ہمارے ، جو سب سے اعلیٰ تعلیم یافتہ طبقہ ہے ، کے ماہانہ مشاہرے میں کمی کی گئی ہے یہ انتہائی دل شکن بات ہے اور ہمارے ساتھ بہت بڑا استحصال ہے ‘۔انہوں نے کہا کہ یہاں اعلیٰ تعلیم یافتہ ہونے کا صلہ یہی ہے کہ مشاہرہ کم کیا جائے گا۔

    یہ بھی پڑھیں  اننت ناگ تصادم میں ایک دہشت گرد ہلاک، دو فرار، تلاشی مہم جاری

    موصوف نے کہا کہ نئے کالجوں کا قیام بھی عمل میں لایا گیا ہے اور ان میں بھی بھرتی کرنے کی ضرورت ہے لیکن جب مشاہرہ کم ہو تو اعلیٰ تعلیم یافتہ نوجوان دوسرے ذرائع معاش کی تلاش کریں گے ۔قابل ذکر ہے کہ کالج کنٹریکچول لیکچررس عرصہ دراز سے نوکریاں مستقل کرنے کا مطالبہ کررہے ہیں جس کے لئے انہوں نے کئی بار احتجاجی مظاہرے بھی کئے ۔ ان کا کہنا ہے کہ زبانی طور پر ہمیں کئی بار جاب سکیورٹی کی یقینی دہانی کی گئی بلکہ ماہ جنوری کی چھ تاریخ کو جموں کشمیر کے لیفٹیننٹ گورنر گریش چندرا مرمو کے مشیر کے کے شرما نے بھی ہمیں نوکریاں مستقل کرنے کی یقین دہانی کی لیکن فی الوقت یہ سب زبانی جمع خرچ ہی ثابت ہوا ہے ۔

    یہ بھی پڑھیں  حقائق پر مبنی صحافت سے جمہوریت کو تقویت ملتی ہے:اکھلیش یادو

    LEAVE A REPLY

    Please enter your comment!
    Please enter your name here
    یہ بھی پڑھیں  دہلی کیلئے تمام راستے بند،کسانوں نے منگل کو ملک گیر بند کرنے کی اپیل

    Latest news

    میرٹ کی بنیادپر منتخب ہونے والے 670طلباء میں ہندوطلباء بھی شامل

    تعلیمی سال 2021-2022کے لئے جمعیۃعلماء ہند کے وظائف جاری ، مذہب سے اوپر اٹھ کر کام کرنا تو جمعیۃعلماء...

    آدیش گپتا نے اپنے بیٹوں کے ساتھ مل کر ایم سی ڈی کی زمین پر اپنا سیاسی دفتر بنایا: درگیش پاٹھک

    نئی دہلی : عام آدمی پارٹی کے ایم سی ڈی انچارج درگیش پاٹھک نے کہا کہ بی جے پی...

    مغربی يو پی : راشٹریہ لوک دل اور سماج وادی پارٹی اتحاد کتنا مضبوط ؟

    مغربی یوپی : مظفر نگر فسادات کے بعد مغربی یوپی میں بالخصوص پوری ریاست میں بالعموم فرقہ واریت اور...

    صوبائی کنونشن میں رئیس الدین رانا کو ”حفیظ میرٹھی ایوارڈ“ ملنے پر ایسوسی ایشن نے کیا استقبال

    مظفر نگر : اردو ٹیچرز ویلفیئر ایسوسی ایشن مظفر نگر کے عہدیداران نے آج صوبائی نائب صدر رئیس الدین...

    اسمبلی الیکشن : سوشل میڈیا کے چاروں پلیٹ فارموں پر سرگرم

    لکھنؤ : ملک کی سیاسی سمت کو طے کرنے والے صوبے اترپردیش میں کورونا بحران کے درمیان ہورہے اسمبلی...

    میرے والد اعظم خان کی جان کو خطرہ : عبد اللہ اعظم

    عبد اللہ اعظم نے کہا کہ کورونا پروٹوکول کے نام پر لوگوں کا استحصال کیا جا رہا ہے، گھر...

    Must read

    You might also likeRELATED
    Recommended to you