رازداری پالیسی

ہمارے بارے میں

رابطہ

  • قومی نیوز
  • ہوم

    Hindi

    Epaper Urdu

    YouTube

    Facebook

    Twitter

    Mobile App

    مرکزی وزیر گری راج سنگھ کے ذریعہ دارالعلوم دیوبند سے متعلق متنازعہ بیان پر چوطرفہ مذمتوں کا سلسلہ جاری

    میرٹھ:مرکزی وزیر گری راج سنگھ کے ذریعہ دارالعلوم دیوبند سے متعلق متنازعہ بیان پر چوطرفہ مذمتوں کا سلسلہ جاری ہے، علمائے کرام ودانشور حضرات کی طرف سے اس بیان کو شر انگیزی اور فرقہ پرستی کو ہوا دینے کے مترادف قرار دیا جارہا ہے اور ملک کے سنجیدہ شہریوں اور ذمہ داران کی طرف سے ملکی امن وامان اور سالمِیت پر اثر انداز ہونے کی مذموم کوشش سے تعبیر کیا جارہا ہے، اسی سلسلہ میں آج یہاں آل انڈیا ملی کونسل کے عہدیداران پر مشتمل ایک وفد کے ہمراہ ریاستی صدر مولانا گلزارؔ قاسمی نے مقامی اخبار نویسوں سے گفتگو کے دوران گری راج سنگھ کے بیان کو نہایت غیر ذمہ دارانہ بیان اور فرقہ وارانہ ماحول خراب کرنے کی شرمناک ومذموم ترین کوشش قرار دیا، انہوں نے اس بیان کو نہایت افسوسناک اور قابل مذمت بتاتے ہوئے سخت الفاظ میں مذمت کی اور مطالبہ کیا کہ مرکزی سرکار اور بی جے پی ہائی کمان کو اس کے خلاف نوٹس لیکر فوری کارروائی کرنے کی ضرورت ہے، مولانا قاسمی نے کہا کہ مسلم دشمنی کے جذبہ سے دئے گئے اس بیان سے دارالعلوم دیوبند کی شہرت وآفاقیت پر تو کوئی فرق پڑنے والا نہیں اس کے پیچھے تو خدمات اور قربانیوں کا ایک طویل سلسلہ اور زریں تاریخ ہے.

    یہ بھی پڑھیں  ادھو ٹھاکرے نے کہا مہاراشٹر میں این آر سی نافذ نہیں ہوگی

    البتہ اس طرح کے بیانات سے ایسے لوگوں کی دریدہ دہنی اور گھٹیا سوچ کا مظاہرہ ضرور ہوتا ہے، جو ملک کے جمہوری نظام اور سیکولر کردار کے لئے نقصان کا سبب ہے، یہ لوگ اس ملک کی قدیم روایات اور گنگا جمنی تہذیب میں یقین نہیں رکھتے، انہوں نے کہا کہ دہلی الیکشن کے بعد وزیر داخلہ کا لہجہ تو بدلا ہے تاہم برسر اقتدار جماعت اور حکومت کے کئی ارکان ہرزہ سرائی کے ذریعہ اپنی اور حکومت کی ساکھ کو برابر نقصان پہونچارہے ہیں، اس بات کو حکومت جتنی جلد سمجھ لئے اتنا ہی فائدہ ہے، اس موقع سے جامعہ گلزارِ حسینیہ اجراڑہ کے صدر المدرسین مولانا سید عقیل احمد قاسمی نے مرکزی وزیر کے بیان کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ ایسے لوگ ملک کے امن وسلامتی کے لئے شدید خطرہ ہیں جو سستی شہرت اور مسلم دشمنی کے چکر میں ملکی مستقبل اور ترقی کی راہ میں روڑا اٹکانے کا کام کررہے ہیں، ان کو خوب سمجھ لینا چاہئے کہ آج ملکی عوام میں بیداری آرہی ہے وہ ایسے کسی پروپیگنڈہ کا شکار ہونے والے نہیں ہیں دہلی الیکشن نے اسکا ثبوت فراہم کردیا ہے، اس لئے سرکار اور سرکاری نمائندے بھی جتنی جلد اس بات کو سمجھ لیں یہ ان کے حق میں بھی بہتر ہے اور ملک کے حق میںبھی

    یہ بھی پڑھیں  وقف بورڈ نے نئی کمیٹی بناکر حوالے کی درگاہ کی ذمہ داری
    یہ بھی پڑھیں  ہمارا مطالبہ یہ ہے کہ ہریانہ حکومت پہلے کھوری گاؤں میں رہنے والے لوگوں کی بحالی کرے اور ہمارے زیر حراست ساتھیوں کو فوری رہا کرے: سشیل گپتا

    انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم ایسے بیانات سے پلہ جھاڑ لیتے ہیں لیکن کوئی کارروائی نہیں کرتے جس سے پلاننگ کا شائبہ ہونے لگتا ہے، منافرت پھیلانے والوں کو کابینہ میں جگہ دی جاتی ہے، جرائم پیشہ لوگوں کو پارلیمنٹ کے لئے منتخب کیا جاتا ہے، جس پر سپریم کورٹ بھی مفکر مند ہے، یہ عمل جمہوریت کے لئے تباہ کن ہے، مولانا عبدالواحد قاسمی سلائی نے گری راج کی دریدہ دہنی سے ملک میں بدامنی کے اندیشہ کا اظہار کرتے ہوئے اس کو انتہائی غلط بیان بتاکر کہا کہ دارالعلوم کو چھیڑا جاتا ہے تو ملکی مسلمان ہرگز خاموش تماشائی بنا نہیں رہ سکتا، انہوں نے کہا کہ یہ وہی دارالعلوم ہے جس سے اٹھنے والی شیخ الہند کی ریشمی رومال تحریک نے جنگ آزادی کو نئی زندگی دی اور جس کے سپوت وطن عزیز کے لئے مالٹا میں مقید رہے ہیں، گری راج سنگھ کو کسی بھی غلط بیانی سے پہلے دارالعلوم ودیگر مدارس اسلامیہ کی تاریخ پڑھنی چاہئے، مولانا معین اختر خان قاسمی شاہجہانپور نے اس بیان پر اظہار افسوس کے ساتھ کہا کہ دنیا جانتی ہے کہ یہ بیان خلاف واقعہ ہے، دارالعلوم کی زریں تاریخ سے دنیا واقف ہے، ایسے بیانوں سے دارالعلوم کو نہیں البتہ خود بیان بازی کرنے والوں اور سرکار کی ساکھ کو نقصان پہونچے گا

    یہ بھی پڑھیں  عام آدمی پارٹی نے جاری کیا کیجریوال کا گارنٹی کارڈ
    یہ بھی پڑھیں  ادھو ٹھاکرے نے کہا مہاراشٹر میں این آر سی نافذ نہیں ہوگی

    انہوں نے کہا کہ ملک کی آزادی میں دارالعلوم دیوبند کی ناقابل فراموش قربانیاں ہیں جن کو تاریخ سے ہٹایا یا بھلایا نہیں جاسکتا، مولانا محمد اقبال قاسمی جڑودہ نے گری راج کے بیان کو امن وآشتی اور بھائی چارہ کو نقصان پہونچانے والا بیان بتاتے ہوئے کہا کہ یہ ملک نفرت کی سیاست کو درکنار کررہا ہے، سرکار کے اقدمات سے ملک بھر میں افرا تفری کا ماحول ہے، بے چینی ہے، ایسے میں دہلی کے نتائج سے سبق لینے کے بجائے سرکاری نمائندے بے لگام ہورہے ہیں، جن پر کنٹرول کرنا حکومت کی ذمہ داری ہے۔

    LEAVE A REPLY

    Please enter your comment!
    Please enter your name here

    Latest news

    اردو اکادمی دہلی ، دہلی ای۔ لرننگ کورس جلد شروع کرے: منیش سسودیا

    اردو اکادمی، دہلی کی دہلی سیکریٹریٹ میں منعقدگورننگ کونسل کی میٹنگ میں کئی اہم تجاویز پیش نئی دہلی : اردو...

    عام آدمی پارٹی کے روہتاش نگر ودھان سبھا میں منعقدہ مظاہرے میں مقامی لوگوں کی ایک بڑی تعداد نے حصہ لیا

    نئی دہلی : بی جے پی کی زیر اقتدار ایم سی ڈی میں بدعنوانی اور مودی حکومت کی ناکام...

    ہر فرد میں ایک دلی جذبہ ہے ،یہاں لوگ ادب سے محبت کرتے ہیں : عامر اصغر قریشی

    شہر ناندورا میں سہ ماہی تکمیل کے مدیر عامر اصغر قریشی کے اعزاز میں ادبی نشست ناندورا : بتاریخ 23...

    ایم سی ڈی بلڈر مافیا کے تعاون سے لیز پر دی گئی دکانوں کا سروے کررہی ہے اور عمارت کو خطرناک دکھا کر خالی...

    نئی دہلی : عام آدمی پارٹی نے بی جے پی کے زیر اقتدار نارتھ ایم سی ڈی کی طرف...

    اگلے تین دن تک مسلسل بارش کے امکانات ، تمام افسران دن میں 24 گھنٹے دستیاب رہیں گے ، کسی بھی وقت ضرورت ہوسکتی...

    نئی دہلی : لیفٹیننٹ گورنر اور وزیر اعلی اروند کیجریوال نے آج ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے دہلی کے نکاسی...

    Must read

    You might also likeRELATED
    Recommended to you