رازداری پالیسی

ہمارے بارے میں

رابطہ

  • قومی نیوز
  • ہوم

    Hindi

    Epaper Urdu

    YouTube

    Facebook

    Twitter

    Mobile App

    دفتر اور عملہ کی کمی کی وجہ سے ، کمیشن کے صدر کبھی کبھی کانفرنس روم میں آکر بیٹھ جاتے ہیں: آتشی

    نئی دہلی : سینئر رہنما اور عام آدمی پارٹی کی ایم ایل اے آتشی نے کہا کہ مرکزی حکومت آلودگی کے معاملے میں سنجیدہ نہیں ہے۔ مرکزی حکومت نے آلودگی پھیلانے والوں پر کارروائی کرنے کے لئے ایک ایئر کوالٹی کمیشن تشکیل دیا ہے، لیکن ابھی تک نہ تو دفتر اور نہ ہی عملے کو کمیشن کی چیئرپرسن کو سونپ دیا گیا ہے۔ دفتر اور عملہ کی کمی کی وجہ سے ، کمیشن کی چیئرپرسن کبھی کبھی کانفرنس روم میں آکر بیٹھ جاتی ہے۔ ایم ایل اے آتشی نے مرکزی حکومت سے درخواست کی ہے کہ کمیشن کی چیئرپرسن کو جلد سے جلد دفتر اور عملہ دیا جائے ، تاکہ وہ اپنا کام انجام دیں ، بصورت دیگر اس کمیشن کے تشکیل کا کوئی جواز نہیں ہے۔

    عام آدمی پارٹی کی سینئر رہنما آتشی نے ایک بیان جاری کیا جس میں کہا گیا ہے کہ دہلی-این سی آر میں بڑھتی ہوئی فضائی آلودگی کے مسئلے کے پیش نظر مرکزی حکومت نے ایک کمیٹی تشکیل دی ہے ، جس کا نام قومی دارالحکومت اور ایڈجائننگ میں کمیشن برائے ایئر کوالٹی مینجمنٹ ہے۔ علاقوں انہوں نے بتایا کہ یہ کمیٹی گزٹ نوٹیفکیشن کے تحت 5 نومبر کو تشکیل دی گئی تھی۔ اس کمیٹی کو 28 اکتوبر کو ایک آرڈیننس کے ذریعے تشکیل دیا گیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ چونکہ دہلی این سی آر میں فضائی آلودگی ایک بہت بڑا مسئلہ ہے۔ خاص طور پر اکتوبر ، نومبر کے مہینے میں، لوگوں کو سانس لینا مشکل ہوجاتا ہے۔ اسی وجہ سے یہ کمیٹی تشکیل دی گئی اور اس کمیٹی کو کچھ اختیارات بھی دیئے گئے۔

    یہ بھی پڑھیں  شام کی جنگ: ترکی مزید پناہ گزین نہیں سنبھال سکتا : اردگان

    انہوں نے بتایا کہ اپنے اختیارات کی بنیاد پر، یہ کمیٹی ریاستی حکومتوں کے آلودگی کنٹرول انسٹی ٹیوٹ اور مرکزی حکومت کے آلودگی کنٹرول انسٹی ٹیوٹ کو ہدایت جاری کرسکتی ہے۔ آتشی نے کہا کہ سپریم کورٹ سے پہلے مرکزی حکومت نے بتایا کہ ہم نے دہلی این سی آر میں آلودگی کو کنٹرول میں رکھنے کے لئے یہ کمیٹی تشکیل دی ہے۔ انہوں نے انھیں بتایا کہ مرکزی حکومت کی دلیل کے پیش نظر ، ہم نے اس کمیٹی کے سامنے ایک تجویز پیش کی تھی کہ پنجاب اور ہریانہ کی حکومتوں کے خلاف پرالی جلانے کے خلاف سخت کارروائی کی جانی چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ گذشتہ ایک ماہ سے پنجاب اور ہریانہ میں پرالی جلنے کی وجہ سے آلودگی کی سطح اتنی شدید ہوگئی تھی کہ لوگوں کو سانس لینے میں بھی دشواری کا سامنا کرنا پڑا تھا۔

    یہ بھی پڑھیں  پارلیمنٹ کا بجٹ اجلاس 29 جنوری سے 8 اپریل تک رہے گا جاری

    لیکن چونکہ پچھلے چار پانچ دن سے اسٹربل کا آتش گیر ہونا بند ہوا ا س سے ہوا کی آلودگی کی سطح نیچے آگئی ہے۔ ہم نے اس کمیٹی کے سامنے تجویز پیش کی ہے کہ پنجاب اور ہریانہ کی حکومتوں کے خلاف سخت کارروائی کی جانی چاہئے کہ وہ اپنی ریاستوں میں پرالی جلانے کو کیوں نہیں روک سکے ہیں؟ کسان دہلی پوسا انسٹی ٹیوٹ کے تیار کردہ پرالی کو کسانوں کو کھاد میں تبدیل کرنے کے لئے استعمال کرنے میں کیوں ناکام رہے؟ جبکہ یہ مواد صرف 30 روپے فی ایکڑ کی لاگت سے کیا جاسکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں پوری امید ہے ، چونکہ اس کمیٹی کے پاس کافی اختیارات ہیں ، لہذا یہ کمیٹی فوری طور پر پنجاب اور ہریانہ کی حکومتوں کے خلاف سخت کارروائی کرے گی۔

    یہ بھی پڑھیں  سوچی کا روہنگیا مسلمانوں پر میانمار فوج کے مظالم کا دفاع

    انہوں نے کہا کہ یہ انتہائی افسوس کی بات ہے کہ جب میں نے اس تناظر میں معلومات حاصل کرنے کے لئے اس کمیٹی کو خط لکھا تھا اور یہ خط میرے دفتر سے کمیٹی کو سونپنے کے لئے بھیجا گیا تھا ، تب میں وہاں کمیٹی کی حقیقت کا پتہ چلا. کمیٹی کے پاس اختیارات رکھنے کا معاملہ تو دور کی بات ہے ، صورتحال یہ ہے کہ اس کمیٹی کے پاس وزارت ماحولیات میں بیٹھنے کی گنجائش بھی نہیں ہے۔ کمیٹی کے چیئرپرسن کے بیٹھنے کے لئے کوئی جگہ نہیں ہے۔ انہوں نے بتایا کہ جب ہم خط دینے وہاں پہنچے تو معلوم ہوا کہ کمیٹی کا چیئرپرسن کبھی کبھار آجاتے ہیں ، پھر کانفرنس روم میں بیٹھ جاتے ہیں۔

    آتشی نے کہا کہ یہ انتہائی حیرت کی بات ہے کہ مرکزی حکومت نے کمیٹی کے لئے بیٹھنے کے لئے ایک کمرہ بھی فراہم نہیں کیا ہے جو فضائی آلودگی کی روک تھام کے لئے تشکیل دی گئی ہے۔ صرف یہی نہیں ، جب ہم خط دینے وہاں پہنچے تو معلوم ہوا کہ کمیٹی نے ابھی تک کوئی عملہ مقرر نہیں کیا ہے ، جو خط وصول کرکے رسید پر دستخط کرسکے۔ انہوں نے کہا کہ جب ہم نے چیئرپرسن سے ملاقات کے لئے وقت مانگا تو معلوم ہوا کہ ایسا کوئی شخص نہیں ہے جو کرسی پرسن سے ملنے کا وقت بتا سکے، یا ملاقات کا وقت دے سکے۔

    یہ بھی پڑھیں  آئین ہند کے خلاف کوئی بھی اقدام کرے گا ہم اس کو کسی قیمت پربرداشت نہیں کریں گے
    یہ بھی پڑھیں  شام کی جنگ: ترکی مزید پناہ گزین نہیں سنبھال سکتا : اردگان

    اس بیان کے ذریعے مرکزی حکومت سے درخواست کرتے ہوئے آتشی نے کہا کہ میں مرکزی حکومت سے درخواست کرنا چاہتی ہوں کہ یہ کمیٹی آپ نے تشکیل دی ہے ، براہ کرم اس کمیٹی اور کمیٹی کے چیئرمین کو ذاتی حیثیت میں بھیجیں دفتر مہیا کریں ، کمیٹی میں عمل کے لئے عملہ کی تقرری کریں ، اور جن عمومی تقاضوں پر عمل درآمد کے لئے درکار ہیں ، اس کمیٹی کو تمام سہولیات فراہم کی جائیں ، بصورت دیگر اس ادارے کے تشکیل کا کوئی جواز باقی نہیں رہ جائے گا۔

    LEAVE A REPLY

    Please enter your comment!
    Please enter your name here

    Latest news

    دس مہینے بعد تعلیمی سرگرمی شروع ہونے سے بچوں کے چہروں پر لوٹی مسکراہٹ

    نئی دہلی: دس مہینے بعد دہلی کے اسکولوں میں محدود ہی سہی لیکن رونقیں واپس لوٹ آئی ہیں۔ کل...

    دہلی فسادات معاملہ،متاثرین کی باز آبادکاری میں مصروف اقلیتی فلاحی کمیٹی

    میٹنگ میں جلد سے جلد زیر التوامعاملات کے نپٹارہ کی افسران کو ہدایت،کچھ معاملات میں دوبارہ سروے کرنے کی...

    بی جے پی کے زیر اقتدار ایم سی ڈی سے نہ صرف دہلی کے لوگ متاثر ہیں، بلکہ ملازمین بھی نالاں ہیں : سوربھ...

    نئی دہلی : عام آدمی پارٹی کے چیف ترجمان سوربھ بھاردواج نے کہا کہ بی جے پی کے زیر...

    راجیندر نگر کے ایم ایل اے راگھو چڈھا نے سوامی دیانند سروودیا کنیا اسکول کا دورہ کیا

    لاک ڈاؤن کے بعد اسکول کھلنے کے بعد سکیورٹی کے تمام انتظامات کردیئے گئے ہیں، طلباء اساتذہ کو N95...

    Must read

    You might also likeRELATED
    Recommended to you