رازداری پالیسی

ہمارے بارے میں

رابطہ

  • قومی نیوز
  • ہوم

    Hindi

    Epaper Urdu

    YouTube

    Facebook

    Twitter

    Mobile App

    بھوپیش حکومت نے پاکستانی پناہ گزینوں کی شہریت پر لگائی روک

    رائے پور:ملک بھر میں شہریت ترمیم قانون (سی اے اے) پر ہنگامے کے درمیان چھتیس گڑھ میں بھوپیش بگھیل کی حکومت نے پاکستان اور بنگلہ دیش سے آئے پناہ گزینوں کی شہریت کی کارروائی پر روک لگا دی ہے ۔اطلاعات کے مطابق ابھی تک 130 لوگوں کو شہریت دی گئی ہے لیکن اسی سلسلے میں 67 پاکستانی ہندوؤں کی شہریت اب ‘پلمبنگ’ میں اٹکی ہوئی ہے۔انتظامیہ کا اس سلسلے میں کہنا ہے کہ ان تمام افراد کے لئے ابھی قانونی کارروائی جاری ہے ۔

    رائے پور اے ڈی ایم ونیت ندنوار نے بتایا کہ ابھی تک 130 لوگوں کو شہریت دی گئی ہے لیکن اسی سلسلے میں 67 پاکستانی ہندوؤں کی شہریت ابھی ‘پلمبنگ’ میں اٹکی ہوئی ہے۔ اے ڈی ایم نے بتایا کہ جنہیں شہریت دی جا چکی ہے، وہ باہر کے ملک سے آئے ایسے لوگ ہیں جو ویزا اور پاسپورٹ ہولڈر ہیں۔ چھتیس گڑھ میں آئے پاسپورٹ اور ویزا ہولڈر 67 پاکستانی شہریوں کے بارے میں انٹیلی جنس ایجنسیاں اور مقامی پولیس کی جانب سے جانچ رپورٹ نہیں ملی ہے۔ اس کی وجہ سے 67 لوگوں کی شہریت لٹکی ہوئی ہے۔اے ڈی ایم نے بتایا کہ جن غیر ملکی شہریوں کو بھارتی شہریت دینے کا عمل مکمل ہوچکا ہے یا چل رہی ہے، یہ وہ لوگ ہیں جو پرانے شہری قوانین کے مطابق 12 سال ملک میں گزار چکے ہیں۔

    یہ بھی پڑھیں  وزیر اعظم نریند ر مودی نے کہا ’ لوگوں کی قربانی ، ریاضت کی وجہ سے ملی آزادی ‘
    یہ بھی پڑھیں  ایس ایس بی کے جوان سال میں سو دن خاندان کے ساتھ گزار سکیں گے: امت شاہ

    جب اس سلسلے میں ہندوستان سماچار نے اے ڈی ایم سے یہ جاننا چاہا کہ شہریت قانون 10 جنوری کو لاگو ہو چکا ہے اور نئے قانون کے مطابق اب 6 سال بعد ہی شہریت دینے کا قانون ہے تو انہوں نے کہا کہ نئے شہریت قانون کا نوٹیفکیشن انہیں ابھی تک نہیں ملا ہے۔ سوال ہے کہ جب ضلع کلکٹر دفتر میں نئے شہریت قانون کا گزٹ پہنچا ہی نہیں ہے تو نئے قانون کے مطابق پاکستان سے آئے شہریوں کو بھارتی شہریت کس طرح دی جائے گی۔ سوال یہ بھی ہے کہ مرکزی حکومت کی طرف سے قانون لاگو کر دیئے جانے کے بعد بھی اگر ریاست میں ضلع افسروں کو اس قانون کی بارے میں اہم اطلاع نہیں دی گئی ہے تو اس کا مطلب کیا ہے۔

    قابل ذکر ہے کہ ریاست کے وزیر اعلی بھوپیش بگھیل شہریت ترمیم قانون اور این آر سی کی مخالفت کرچکے ہیں۔ انہوں نے کئی بار بیان دیا ہے کہ وہ چھتیس گڑھ میں شہریت قانون نافذ نہیں ہونے دیں گے۔ ان درمیان سب سے بڑا سوال ہے کہ پاسپورٹ اور ویزا جیسے دستاویزات کے بغیر چھتیس گڑھ آنے والے پاکستانی اور بنگلہ دیشی پناہ گزینوں کے بارے میں چھتیس گڑھ انتظامیہ کے پاس کوئی رپورٹ نہیں ہے اور نہ ہی انہیں شہریت دینے کی ابھی تک کوئی پہل کی جا سکی ہے۔ چھتیس گڑھ میں تقریبا 6 لاکھ غیر ملکی پناہ گزینوں کا سرکاری اعداد و شمار موجود ہے۔ ان میں سب سے زیادہ بنگلہ دیشی پناہ گزین ہیں۔

    یہ بھی پڑھیں  جامعہ ملیہ پولیس تشدد معاملہ : ایک آنکھ گنواچکے منہاج الدین کو دہلی وقف بورڈ میں مستقل ملازمت

    LEAVE A REPLY

    Please enter your comment!
    Please enter your name here
    یہ بھی پڑھیں  جامعہ ملیہ پولیس تشدد معاملہ : ایک آنکھ گنواچکے منہاج الدین کو دہلی وقف بورڈ میں مستقل ملازمت

    Latest news

    دہلی حکومت کے کوویڈ اسپتالوں میں آئی سی یو بیڈوں کی مسلسل بڑھ رہی ہے تعداد

    نئی دہلی : کوویڈ -19 کے خلاف دہلی کی لڑائی میں طبی بنیادی ڈھانچے کو مستحکم کرنے کے لئے...

    اردو یونیورسٹی کے ریگولر کورسس میں آن لائن داخلے جاری

    حیدرآباد : مولانا آزاد نیشنل اردو یونیورسٹی نے تعلیمی سال 2020-21 کے لیے مرکزی کیمپس حیدرآباد اور دیگر سٹیلائٹ...

    ’جیو میٹ ‘زوم کے مقابلے آسان:امیتابھ کانت

    جیو میٹ کے سافٹ لانچ اور اس کے استعمال سے ہر کسی کو مفت ویڈیو کانفرنسنگ سہولت کے بعد...

    جنوبی کشمیر کے ضلع اننت ناگ میں تصادم، دو جنگجو ہلاک

    سری نگر : جنوبی کشمیر کے ضلع اننت ناگ کے واگہامہ بجبہاڑہ میں منگل کی علی الصبح ہونے والے...

    چینی ایپ پر پابندی لگانے پر ملک نے تعریف کی : جاوڈیکر

    نئی دہلی : اطلاعات و نشریات کے وزیر پرکاش جاوڈیکر نے آج کہا کہ 59موبائل ایپ پر پابندی لگانے...

    بی جے پی کے خلاف کانگریس کارکنان اترے سڑکوں پر

    لکھنؤ : اترپردیش میں تین دہائیوں سے زیادہ وقت سے اقتدار سے باہرکانگریس اس وقت جس طرح سے ریاستی...

    Must read

    You might also likeRELATED
    Recommended to you