رازداری پالیسی

ہمارے بارے میں

رابطہ

  • قومی نیوز
  • ہوم

    Hindi

    Epaper Urdu

    YouTube

    Facebook

    Twitter

    Mobile App

    شہریت ترمیمی قانون : سپریم کورٹ نے سی اے اے ، این پی آر پرعارضی پابندی سے انکار 4 ہفتے میں مرکز سے مانگا جواب

    نئی دہلی:چیف جسٹس نے سی اے اے ، این پی آر پرعارضی پابندی سے انکار کردیا ہے۔اٹارنی جنرل سی اے اے کے تمام معاملات میں حلف نامے داخل کرنے کے لئے چھ ہفتوں دینے کا مطالبہ کیاہے۔ تاہم سینئروکیل کپل سبل اور دیگر افراد اس تجویز کی مخالفت کرتے ہیں۔ اس کے بعد چیف جسٹس نے سی اے اے یا این پی آر کے خلاف کارروائی کے خلاف کسی بھی قسم کے پابندی کا حکم دینے سے انکار کردیا ، اور مرکزی حکومت کو سی اے اے کے معاملات میں جواب داخل کرنے کے لئے 4 ہفتوں کی مہلت دے دی۔ عدالت نے اس معاملہ پر بڑی آئینی بینچ بنانے کا بھی اشارہ دیاہے۔ لیکن ابھی اس معاملہ میں ابھی کوئی فیصلہ نہیں لیاگیاہے۔چیف جسٹس نے یہ بھی کہا ہے کہ آسام اور تریپورہ کے معاملات کو ایک ساتھ جوڑا جائے گا تاکہ ان سے الگ سے نمٹا جائے۔ عدالت سبل سے ان معاملات کی نشاندہی کرنے میں تعاون کرنے کو کہتی ہے۔ سپریم کورٹ کا کہنا ہے کہ مزید یہ کہ سی اے اے کے معاملات سے متعلق تمام طریقہ کار امور چیمبر کے اندر اٹھائے جائیں گے۔ تمام معاملات پر نوٹس جاری کریں۔ اے جی جواب دینے کے لئے وقت طلب کرتے ہیں۔

    یہ بھی پڑھیں  بابری مسجد ملکیت مقدمہ،تمام متنازعہ جگہ رام کی جائے پیدائش نہیں ہوسکتی

    جس کے بعد مرکز کوجواب کے لئے 4 ہفتوں کا وقت دیاگیاہے۔ شہریت کے نئے قانون سے متعلق آج کی سماعت ختم ہونے سے پہلے عدالت عظمیٰ نے دیگر تمام اعلی عدالتوں کو سی اے اے کے بارے میں کوئی حکم دینے پر بھی روک دیا ہے۔چیف جسٹس نے کہا کہ اس وقت ہم حکومت سے عارضی شہریت دینے کا مطالبہ کیاجاسکتاہے۔ ہم کوئی یکطرفہ فیصلہ نہیں کرسکتے ہیں۔ اٹارنی جنرل نے کہا کہ اس معاملے میں فوری حکم نامے کی کوئی ضرورت نہیں ہے۔ اس پر اعتراض کرتے ہوئے سینئر وکیل وکاس سنگھ نے کہا کہ سی اے اے کے تحت بنگلہ دیش سے آنے والے آدھے افراد ہندو اور آدھے مسلمان ہیں۔ آسام میں 40 لاکھ بنگلہ دیشی ہیں۔ اس قانون کے تحت آدھے لوگوں کو شہریت ملے گی۔ اس سے ساری ڈیموگرافی تبدیل ہوجائے گی۔جبکہ اٹارنی جنرل کے کے وینوگوپال کی استدعا پر ابھیشیک منو سنگھوی نے کہا کہ یوپی میں 40 ہزار افراد کو شہریت دینے کی بات کی جارہی ہے ، اگر ایسا ہوتا ہے تو پھر قانون واپس کیسے ہوگا۔ اسی دوران ایڈوکیٹ وکاس سنگھ ، اندرا جے سنگھ نے عدالت میں کہا کہ آسام سے 10 سے زیادہ درخواستیں ہیں ، وہاں معاملہ بالکل مختلف ہے۔

    یہ بھی پڑھیں  دیا مرزا نے دلکش اداؤں سے ناظرین کو دیوانہ بنایا
    یہ بھی پڑھیں  این سی ایم سی کی رپورٹ:عدالتی انفراسٹرکچر میںدہلی نمبرون

    آسام کے حوالے سے الگ حکم جاری کیا جائے۔اٹارنی جنرل کے کے وینوگوپال نے عدالت کو بتایا کہ انہیں اب تک 144 درخواستوں میں سے 60 کی کاپی موصول ہوئی ہے۔ اس پر کپل سبل نے کہا کہ پہلے فیصلہ کیا جانا چاہئے کہ معاملہ آئینی بنچ کو بھیجنا ہے یا نہیں؟ ہم اس قانون پر پابندی کا مطالبہ نہیں کر رہے ہیں۔ اگر اس قانون پر کوئی پابندی نہیں ہے تو ہمارا مطالبہ ہے کہ سی اے اے کے عمل کو تین ماہ کے لئے ملتوی کردیا جائے۔ترمیم شدہ شہریت ایکٹ (سی اے اے) میں نریندر مودی حکومت نے پاکستان ، افغانستان اور بنگلہ دیش میں مذہبی ظلم و ستم کا شکار ہندو ، سکھ ، عیسائی ، بدھ اور پارسی برادری سے تعلق رکھنے والے افراد کو ہندوستان کی شہریت دینے کا انتظام کیا ہے۔اس میں پڑوسی ممالک میں رہنے والے مسلمانوں اس قانون میں شامل نہیں ہیں۔ یہ قانون 10 جنوری سے نافذ ہوگیاہے۔سپریم کورٹ میں دائر درخواستوں میں کہا گیا ہے کہ ہندوستان میں مذہب کی بنیاد پر امتیازی سلوک نہیں کیا جارہاہے اور یہ ملک کے آئین کی خلاف ورزی ہیں۔ لہٰذا اس قانون کو منسوخ کیا جانا چاہئے اور اس میں مسلمانوں کو بھی شامل کیا جانا چاہئے۔ اس کے علاوہ بہت سے دوسرے ممالک میں بھی لوگوں کو پریشان کیا جاتا ہے اور انہیں ہندوستان میں بھی جگہ ملنی چاہئے۔

    یہ بھی پڑھیں  ہندو اور مسلمان دونوں عدالت کے فیصلہ کا احترام کریں : مولانا ارشد مدنی

    LEAVE A REPLY

    Please enter your comment!
    Please enter your name here
    یہ بھی پڑھیں  ہندو اور مسلمان دونوں عدالت کے فیصلہ کا احترام کریں : مولانا ارشد مدنی

    Latest news

    اسپتال میں ملی ہاپوڑ کے محسن علی کی لاش

    دنگائیوں کی بھینٹ چڑھ گیا معصوم نئی دہلی : شمال مشرقی دہلی میں اتوار سے تشددجاری ہے، اس تشددمیں اب...

    شاہین باغ معاملے میں سماعت کے لئے ماحول سازگار نہیں : سپریم کورٹ

    نئی دہلی:سپریم کورٹ نے بدھ کو دہلی کے شاہین باغ علاقے میں مظاہرین کو ہٹائے جانے سے متعلق عرضیوں...

    شمال مشرقی دہلی میں تشدد میں مرنے والوں کی تعداد 9، حالات کشیدہ

    نئی دہلی: شمال مشرقی دہلی میں شہریت ترمیمی قانون (سی اے اے ) کے خلاف جاری تشدد میں آج...

    این پی آر پرانے طریقے سے ہی ہوگا ، این آر سی غیر ضروری : نتیش

    پٹنہ: بہار کے وزیراعلیٰ نتیش کمار نے آج اسمبلی میں قومی شہری رجسٹر ( این آر سی ) کو...

    مرکزی حکومت نے دہلی میں تشدد کے معاملے پر ہنگامی میٹنگ طلب کی

    نئی دہلی: دہلی میں دو دن سے جاری تشدد کے واقعات کے پیش نظر مرکزی حکومت نے منگل کے...

    ہمیں پھر ایک بار اپنی قربانیوں کا جائزہ لینا پڑے گا : قاری محمد طیب قاسمی

    آنند نگر مہراج گنج : گزشتہ روز ضلع مہراج گنج کی مشہور ادارہ دارالعلوم فیض...

    Must read

    You might also likeRELATED
    Recommended to you